Home - Pakistan - چیف جسٹس سوموٹو اختیارات کی حدود طے کرنا چاہتے ہیں

چیف جسٹس سوموٹو اختیارات کی حدود طے کرنا چاہتے ہیں

اسلام آباد: چیف جسٹس آف پاکستان جسٹس آصف سعید کھوسہ آئین کے آرٹیکل 184 (3) کے تحت عوامی مفاد کے کیسوں میں حاصل سپریم کورٹ کے سوموٹو اختیارات کے استعمال کی حدود وقیود طے کرنا چاہتے ہیں۔چیف جسٹس آصف سعید کھوسہ نے جب سے عہدہ سنبھالا ہے ابھی تک کسی بھی معاملے میں سوموٹو کا اختیاراستعمال نہیں کیا۔ موجودہ چیف جسٹس کی مدت عہدہ دسمبر تک ہے اور سینئر وکلا کا کہنا ہے کہ اس معاملے میں سپریم کورٹ کے رولز میں ترمیم پربرادر ججز کے مابین اتفاق رائے پیدا کرنا ان کیلیے بڑا چیلنج ہوسکتا ہے۔لائرزموومنٹ کے بعد کے گیارہ برسوں میں جوڈیشل ایکٹوازم اور جوڈیشل اختیارات کے محدود استعمال( judicial restraint) کے معاملے میں سینئرججز کا نکتہ نظر مختلف رہا ہے۔2009 میں چیف جسٹس افتخار محمد چودھری کے دور میں اعلی عدلیہ نے عوامی مفادات کے مقدمات میں بنیادی حقوق کے نام پر آرٹیکل 184 (3) کے تحت حاصل اختیارات کا استعمال شروع کیا۔بعد ازاں حال ہی میں ریٹائر ہونے والے چیف جسٹس ثاقب نثار نے جوڈیشل ایکٹوازم کا پورا استعمال کیا لیکن ان کے پیشرو چیف جسٹسز تصدق حسین جیلانی، ناصر الملک اورانور ظہیر جمالی نے اپنے ادوار میں ان اختیارات کو زیادہ استعمال نہیں کیا۔

 

About asas

Check Also

پلوامہ حملے پر بھارتی بیان مسترد؛ بھارت میں نہ مانوں کی رٹ سے باہر آئے، پاکستان

اسلام آباد: دفتر خارجہ کے ترجمان ڈاکٹر فیصل نے پلوامہ حملے سے متعلق بھارتی وزارت …

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے